حفاظتی ویکسینوں کی فراہمی میں تعطل سے لاکھوں بچوں کی زندگی۔۔۔ ڈبلیو ایچ اوکے سربراہ نے خطرے کی گھنٹی بجا دی

Published On: 2020-05-23 09:24:08, By: Asif

جنیوا(ڈیلی پاکستان آن لائن) عالمی ادارہ صحت(ڈبلیو ایچ او) کے ڈائریکٹر جنرل ٹیڈروس ایڈہیم گیبریاسس نے متنبہ کیا ہے کہ کوویڈ19کے پھیلنے سے دنیا بھر میں حفاظتی ٹیکوں کی خدمات کو نقصان پہنچا ہے، جس سے لاکھوں بچوں کی زندگی خطرے میں پڑ گئی ہے۔ غیر ملکی میڈیا کے مطابق جنیوا سے ایک ورچوئل پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے ڈبلیو ایچ او کے سربراہ ٹیڈروس ایڈہیم گیبریاسس نے کہا کہ جس طرح دنیا کوویڈ19کے لئے ایک محفوظ اور موثر ویکسین تیار کرنے کے لئے ایک ہو گئی ہے، تمام ممالک کو زندگی بچانےوالی درجنوں ناگزیرویکسینوں کوفراموش نہیں کرنا چاہئے جو پہلے ہی موجود ہیں اور جن کا ہر جگہ بچوں تک پہنچنا ضروری ہے۔انہوں نے کہا کہ ابتدائی تجزیہ سے معلوم ہواہے کہ معمول کی حفاظتی ویکسینز کی خدمات کی فراہمی میں کم از کم 68 ممالک میں رکاوٹ آئی ہے جس سے ان ممالک میں 1 سال سے کم عمر کے تقریبا 8کروڑ بچوں کے متاثر ہونے کا خدشہ ہے۔ڈبلیو ایچ او کے سربراہ نے مزید کہا کہ بچوں کو قطرے پلانے کی خدمات میں کسی بھی طرح کا تعطل زندگی کے لئے ایک بڑا خطرہ ہے۔انہوں نےزوردےکرکہاکہ صحت سےمتعلق خدمات کی محفوظ فراہمی کی صلاحیت پرعوام کےاعتماد کوبرقرار رکھنا بہت ضروری ہے تاکہ اس بات کو یقینی بنایا جاسکے کہ لوگ ضرورت کے وقت تحفظ کا حصول جاری اورصحت عامہ کے مشوروں پرعمل پیرا ہوں۔ ڈبلیو ایچ او کے سربراہ کے مطابق، ڈبلیو ایچ او جلد ہی کوویڈ19-کے تناظر میں بڑے پیمانے پر ویکسی نیشن مہمات پر عمل درآمد کے بارے میں نئی ہدایات شائع کرے گا۔ انہوں نے کہا کہ اس صدی کے آغاز کے بعد سے محفوظ اور موثر ویکسی نیشن کی وجہ سے وسیع پیمانے پر بچوں کی اموات کی تعداد نصف رہ گئی ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ عالمی ادارہ صحت ترسیل کے سلسلے کھلے رکھنے اور زندگی بچانے والی صحت کی خدمات کی تمام برادریوں تک پہنچ کو یقینی بنانے کے لئے دنیا بھر کی حکومتوں کے ساتھ مل کر کام کر رہی ہے

Re-Designed & Developed By: City Software House Chitral [0345-5742494]